55

بلڈنگ کوڈز پر عملدرآمد سے توانائی کی زیادہ سے زیادہ بچت ممکن ہو سکتی ہے، ابرار ملک۔ ایف این این آئی

ملک کا مسئلہ توانائی کا بہتر استعمال اور مستقبل کی موسمی تبدیلی کے اثرات سے بچاو ہے
محکمہ توانائی پنجاب کے زیر اہمتام سیمینار سے عبدالرحمان ، اسد محمود ، زاہد عثمان،انجینئر فیض بھٹہ،اقرب رانا ، سہیل طاہر کاخطاب

راولپنڈی ( ایف این این آئی) پاکستان میں توانائی کے بے پناہ ذخائر اور مواقع موجود ہیں اور بلڈنگ کورڈرز پر عملدرآمد کے ساتھ ساتھ توانائی کی زیادہ سے زیادہ بچت کے اصولوں کو مدنظر رکھ کر تعمیرکی جانے والی عمارات سے مستقبل میں توانائی کی بچت ممکن بنائی جاسکتی ہے ۔ یہ بات چیئرمین پارکس اینڈ ہارٹیکلچرل اتھارٹی راولپنڈی ملک ابرار احمد ایم این اے نے راولپنڈی میں بلڈنگ دی فیوچر کے موضوع پر محکمہ توانائی پنجاب کے زیر اہتمام سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ انہوں نے صوبائی محکمہ توانائی کی کوششوں کو سراہا اور کہا کہ تمام معاون اداروں اور ماہرین کے تعاون اور اشتراک سے ایسے طریقے وضع کئے گئے گئے اوربلڈنگ ڈیزائن تیار کئے گئے ہیں جن پر عملدرآمد سے تعمیر ہونے والی عمارات کی لاگت اوران عمارات میں استعمال ہونے والی توانائی کی زیادہ سے زیادہ بچت ممکن ہو سکتی ہے۔سیمینار میں شریک آرکیٹکٹس، بلڈنگ انجینئرز، کنٹریکٹرز ، بلڈرز نے بلڈنگ کورڈز کے حوالے سے اپنے تجربات سے آگاہ کیا اور ان طریقوں کے بارے میںآگاہ کیا جن کی مدد سے توانائی کوی ممکن حد تک بچایا جاسکتا ہے اور ایسی رہائشی اور کمرشل عمارات تعمیر ہو سکتی ہیں جو موسمی تغیرات کے اثرات کا مقابلہ کر سکتی ہیں اور وہ زیادہ سود مند اور دیرپا ثابت ہو سکتی ہیں۔پروگرام منیجر پی ای ای سی اے عبدالرحمان نے خطبہ استقبالیہ پیش کرتے ہوئے ان اقدامات پر روشنی ڈالی جن کی مدد سے مختلف سطح پر عوامی آگاہی کی سرگرمیاں جاری ہیں اور متعلقہ اداروں اور شہریوں کو توانائی کی بچت کے لئے تعمیرات کی صنعت میں استعمال ہونے والی انوائرمنٹ فرینڈلی ٹیکنالوجی سے متعارف کرایا جارہا ہے۔سیمینار میں کنسٹرکشن کے تمام متعلقہ شعبوں کے ماہرین نے اہم موضوعات کے بارے میں اظہار خیال کیا اور کانفرنس کو نہایت اہم اور مفید قرار دیتے ہوئے کہاکہ توانائی کی بچت عہد حاضر کی اشد ضرورت ہے اور اس ٹیکنالوجی کو عام کرکے قومی سطح پر توانائی کے محفوظ اور باکفایت استعمال کو یقینی بنایا جاسکتا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ مکیینکل اور الیکٹریکل پر مزید توجہ دی جائے تاکہ آتشزدگی ، زلزلہ یا کسی بھی ہنگامی صورت حال میں کسی طرح بچت ممکن ہوسکے۔ سیمینار سے ،انجینئر اسد محمود ، زاہد عثمان،انجینئر فیض بھٹہ،اقرب رانا ، سہیل طاہراور دیگر ماہرین نے اظہار خیال کے دوران کہا کہ کئی سفارشا ت پیش کیں اور کہا کہ ایوانہائے صنعت و تجارت کے نمائندوں سے بھی مشاورتی کانفرنسیں منعقد کی جائیں تاکہ بلڈنگ کورڈز پر موثر عملدرآمد ہو سکے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں